استعمار اور طلباء و دانشوروں کے خلاف سازش! از شہید مطہری

وہ استعماری سازش جس سے قرآن نے ہمیں خبردار کیا ہے!

ہمارے زمانے میں بھی استعمار جہاں کہیں بھی اپنے قدم جمالیتا ہے، اسی مسئلے پہ انحصار کرتا ہے کہ جس کے متعلق قرآن مجید نے ہمیں خبردار کیا ہے، یعنی بھرپور کوشش کرتا ہے کہ دلوں کو فاسد العقیدہ بنایا جاسکے۔ جب دل فاسد ہوجائے تو نہ صرف عقل زائل ہوجاتی ہے بلکہ خود(یہ دل) انسان کے ہاتھ پاؤں میں ایک بڑی زنجیر بن جاتا ہے۔

 

درس گاہیں اور یونیورسٹی کھولنے کا استعماری ہدف کیا ہے؟

یہی(لوگوں کے دلوں کو فاسد العقیدہ بنانا)وجہ ہے کہ ہم دیکھتے ہیں کہ استعمار اور انسانی استحصال(ناجائز فائدہ اٹھانا)کرنے والے درس گاہیں اور یونیورسٹی کھولنے سے گھبراتے نہیں اور خود ہی انہیں قائم کرنے کے لئے اقدامات کرتے ہیں۔

لیکن!!!!

دوسری طرف طلباء کے دلوں اور روحوں کو فاسد و تباہ کرنے کے لئے پوری طاقت سے جدوجہد کرتے ہیں۔

 

ایک بیمار روح کسی کام کی نہیں!!

وہ(استعماری طاقتیں) اس حقیقت سے بخوبی واقف ہیں کہ ایک بیمار قلب و روح کچھ نہیں کرسکتی اور ہر طرح کی ذلت اور استحصال کے آگے سر تسلیم خم کردیتی ہے۔

 

 

عہد جوان ، شہید مطہری

0 Reviews

Write a Review

متعلقہ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *